شہید سید ضیاءالدین رضوی اعلی اللہ مقامہ نے سرزمین گلگت آمد کے ساتھ ہی جوانوں کی فکری تربیت کی ماؤں، بہنوں کو ان کا مقام یاد دلایا، بکھری ہوئی ملت کو مختصر وقت میں ایک لڑی میں پرو کر دکھایا، دشمن کی ہر سازش کا مقابلہ کیا … لیکن دشمنان اسلام اپنی سازشوں سے باز نہ آئے اور ملت جعفریہ کے خلاف نت نئی سازشوں کے جال بچھائے جاتے رہے مگر شہید آغا ضیاء الدین رضوی نے ان تمام تر سازشوں کا پردہ چاک کرتے ہوئے ایسی حکمت عملی اپنائی کہ دشمن کو سوائے ذلت و رسوائی کے کچھ نہ حاصل ہوسکا.. شہید نے دشمنان تشیع کی جانب سے مسلط کردہ نظریاتی و مسلح جنگ کے مقابلے میں مومنین بالخصوص جوانوں کو بیدار و ہوشیار کیا اور دفاعی حکمت عملی واضح کی.