شہید آغا سید ضیاءالدین رضوی اعلی اللہ مقامہ قدیمی جامع مسجد کے صحن میں نماز جمعے کا انعقاد کرتے تھے چونکہ قدیمی مسجد کی عمارت چھوٹی تھی جس میں جمعے کے نمازیوں کے لئے جگہ کم پڑتی تھی اس لئے شہید مسجد کے صحن میں نماز جمعہ قائم کرتے۔

گلگت میں نماز جمعے کا قیام اور شعور شہید آغا سید ضیاءالدین رضوی نے مومین کو دیا جس کے بعد جمعے کی نماز میں شریک ہونے والے مومنین کی تعداد سال بہ سال بڑھتی گئی۔ شہید کی شخصیت، تقوی اور الہی و دلنشین خطبات کے نتیجے میں گلگت کے چھوٹے، بڑے اور ہر بوڑھے جوان نے نماز جمعہ میں پابندی کے ساتھ شرکت شروع کی۔

مومنین کی کثیر تعداد کو مدنظر رکھتے ہوئے شہید نے قدیمی مسجد کی جگہ نئی جامع مسجد تعمیر کرنے کا منصوبہ بنایا اور شہادت سے قبل موجودہ جامع مسجد گلگت کو مومنین کے لئے اپنا آخری تحفہ چھوڑ گئے۔